envato

Monday, July 30, 2012

LIFE MIGHT NOT GIVE U A SECOND CHANCE. SO NEVER WASTE A MOMENT WHEN YOU CAN MAKE UP FOR YOUR DEEDS


It was their anniversary,
and Maryam was waiting for her husband Bilal to show up. Things had changed since their marriage, the once cute, Couldn’t-live without-each-other couple had turned bitter...
Fighting over every little thing, both didn't like the way things had changed. Maryam was waiting to see if Bilal remembered it was their anniversary! Just as the door bell rang she ran to find her husband, wet and smiling with a bunch of flowers in his hand. The two started reliving the old days. Making up for fights, there was then plans for dinner, a walk on the beach and much more. And rain outside! It was just perfect.

But the magical moment was paused when the phone in the bedroom rang. Maryam went to pick it up and it was a man. "Hello ma'am, I'm calling from the police station. Is this Mr Bilal Mahomed' number?" "Yes it is!" "Im sorry mam; but there was an accident and a man died. We got this number from his wallet; we need u to come and identify his body." Maryam's heart sank... WHAT ON EARTH!!!! "But my husband is here with me?" "Sorry mam, but the incident took place at 2, when he was boarding the subway. Maryam was about to lose her senses. How could this happen!? She knew these type of things she has heard about the soul of the person coming to meet a loved one before it leaves!

She ran into the other room. He was not there. It was true! He had left her for good! Oh God, she would have died for another chance to make amends for every little silly fight before now! She rolled on the floor in pain. She lost her chance! Forever!

Suddenly there was a noise from the bathroom, the door opened and Bilal came out again and said, "Hun, I forgot to tell you my wallet was stolen today"

LIFE MIGHT NOT GIVE U A SECOND CHANCE. SO NEVER WASTE A MOMENT WHEN YOU CAN MAKE UP FOR YOUR DEEDS!!! Let's start making amends with spouses, With parents, With in-laws, With siblings, With friends, With children, With everyone in short. Share love not hate, you don't know how long you've got to live really.

Monday, July 9, 2012

2nd Khalifa Hazrat Umar Farooq (RA) justices - True Story Of History


Holy Prophet's uncle Abbas (RA) was found in the Mosque of Prophet's house and the house collapses into the channel was the Prophet's Mosque. Some time to drain the water would hurt worshipers. Away the caliphate of Hazrat Umar (RA) For convenience of the worshipers were akhrua water spout. the time of Hazrat Abbas (RA) were not present in the house. Hazrat Abbas (RA) was very angry when he came home. judge, he immediately approached by e Abi Ibn Ka'b (RA) Hazrat Umar (RA) that Allah's name frman issued upon your uncle has filed suit against RA to her due date for the trial court and follow. traveling Umar b Prophet Hazrat Abi bin Ka'b to the date of RA were present at home.

Hazrat Ibn ibn Ka'b (RA) within the house were involved in resolving the problems that Hazrat Umar Farooq (RA) for a very long standing and waiting outside had not. Case was presented to some of the Hazrat Umar RA Abi bin Ka'b wanted but were stopped by and said that the first plaintiff is entitled to claim.
Hazrat Abbas (RA) began the process of case stated that Mr. superb! Channel of my house from the beginning was the Prophet's Mosque, Allah's blessings after alh information traveling in the caliphate of Abu Bakr (RA) was there. But Hazrat Umar (RA) channel in my absence I have akhrua justice is provided as my loss.
Hazrat Abi bin Ka'b (RA) said: Surely you must be fair, rich Believers! You want to say in his defense? Qazi said. Hazrat Umar RA replied: Qazi Saheb, sometimes spattered with his nose to the worshipers were flying. Worshipers of the water spout in order to rest and I think it akhrua is not permitted. Ka'b Ibn Abi (RA), Hazrat Abbas (RA) that he wishes to draw attention?
Hazrat Abbas (RA) replied: Qazi Sahib is the fact that the Messenger of Allah rejected his stick that I marked on the map, I just had open house. Water spout was himself brought before the install here. Holy He ordered me to stand on your shoulders and keep water spout here because I refuse to respect you. but many insist that the Holy Prophet and I was standing on the shoulders and put it where rich water spout Believers have the akhrua.
Qazi said that the event could produce any witnesses? Hazrat Abbas (RA) immediately went out and brought to the Ansar who testified that indeed the water spout traveling Abbas ra tu hukrnsb was standing on the shoulders of the Prophet. Trial testimony eyes bent at the end of the Caliphate He was humble way. It was awesome and they fear Caesar and vernier rulers were afraid too. Hazrat Imam Abbas ahead amrfaruq RA RA said:
Hazrat Ibn Abbas (RA) said: Yes, that justice requires such a vast empire and then saw that the power to rule on the side wall to provide justice and Hazrat Abbas (RA) channel installedApologies for bad manners.

حضور اکرمؐ کے چچا عباس رضی اللہ عنہ کا مکان نبی کریمؐ کی مسجد سے ملا ہوا تھا اور گھر کا پر نالہ مسجد نبوی میں گِرتا تھا۔ بعض دفعہ پر نالے کے پانی سے نمازیوں کو تکلیف ہوتی۔ حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے اپنے دور خلافت میں نمازیوں کی سہولت کے لیے پرنالہ اکھڑوا دیا۔ اس وقت حضرت عباس رضی اللہ عنہ گھر میں موجود نہ تھے۔ حضرت عباس رضی اللہ عنہ گھر آئے تو انہیں بہت غصہ آیا۔ انہوں نے فوراَ قاضی سیدنا ابی ابن کعب رضی اللہ عنہ سے رجوع کیا اور حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے نام فرماں جاری کردیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے چچا نے آپ رضی اللہ عنہ کے خلاف مقدمہ دائر کیا ہے اس لیے مقررہ تاریخ کو عدالت میں پیش ہوں اور مقدمے کی پیروی کریں۔حضر ت عمر رضی اللہ عنہ مقررہ تاریخ کو حضرت ابی بن کعب رضی اللہ عنہ کے مکان پر حاضر ہوگئے۔

حضرت ابن بن کعب رضی اللہ عنہ مکان کے اندر لوگوں کے مسائل حل کرنے میں مصروف تھے اس لیے حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کو کافی دیر باہر کھڑے ہو کر انتظار کر نا پڑا۔ مقدمہ پیش ہوا تو حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے کچھ کہنا چاہا لیکن ابی بن کعب نے انہیں روک دیا اور کہا کہ مدعی کا حق ہے کہ وہ پہلے دعوی پیش کرے۔
مقدمے کی کاروائی شروع ہوئی حضرت عباس رضی اللہ عنہ نے بیان دیا کہ جناب عالی! میرے مکان کا نالہ شروع سے ہی مسجد نبویؐ کی طرف تھا، رسول اللہ صلی اللہ علہ وسلم کے بعد حضر ت ابوبکر رضی اللہ عنہ کے دور خلافت میں بھی یہیں تھا۔ لیکن حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے میری عدم موجودگی میں نالہ اکھڑوا دیا مجھے انصاف فراہم کیا جائے کیونکہ میرا نقصان ہوا ہے۔

حضرت ابی بن کعب رضی اللہ عنہ نے فرمایا: بے شک تمہارے ساتھ انصاف ہوگا، امیر المومنین! آپ اپنی صفائی میں کچھ کہنا چاہتے ہیں ؟ قاضی نے پوچھا۔ حضرت عمر رضی اللہ عنہ جواب دیا: قاضی صاحب، اس پرنالے سے بعض اوقات چھینٹیں اڑ کر نمازیوں پر پڑتی تھیں۔ نمازیوں کے آرام کی خاطر میں نے پرنالہ اکھڑوا دیا اور میرا خیال ہے یہ ناجائز نہیں ہے۔ ابی ابن کعب رضی اللہ عنہ حضرت عباس رضی اللہ عنہ کی طرف متوجہ ہوئے کہ وہ کچھ کہنا چاہتے ہیں ؟

حضرت عباس رضی اللہ عنہ نے جواب دیا: قاضی صاحب اصل بات یہ ہے کہ اللہ کے رسولؐ نے اپنی چھڑی سے مجھے نشان لگا کردئیے کہ میں اس نقشے پہ مکان بناؤں میں نے ایسے ہی کیا ۔پرنالہ خود حضورؐ نے یہاں نصب کروایا تھا۔ حضورؐ نے مجھے حکم دیا کہ میں آپؐ کے کندھوں پر کھڑا ہو کر یہاں پرنالہ لگاؤں میں نے آپؐ کے احترام کی وجہ سے انکار کیا۔ لیکن حضورؐ نے بہت اصرار کیا اور میں نبی کریمؐ کے کندھوں پر کھڑا ہوگیا اور یہ پرنالہ یہاں لگایا جہاں سے امیر المومنین نے 
اکھڑوا دیا۔
قاضی نے پوچھا آپ اس واقعہ کا کوئی گواہ پیش کرسکتے ہیں ؟ حضرت عباس رضی اللہ عنہ فوراَ باہر گئے اور چند انصار کو ساتھ لائے جنہوں نے گواہی دی کہ واقعی یہ پرنالہ حضر ت عباس رضی اللہ عنہ نے حضورؐ کے کندھوں پر کھڑے ہوکرنصب کیا تھا۔ مقدمے کی گواہی کے ختم ہونے بعد خلیفہ وقت نگاہیں جھکا کر عاجزانہ انداز سے کھڑا تھا۔ یہ وہ حکمران تھا جس رعب اور خوف سے قیصر و کسری بھی ڈرتے تھے۔ حضرت عمرفاروق رضی اللہ عنہ آگے بڑھے اور حضرت عباس رضی اللہ عنہ فرمایا:
"اللہ کے لیے میرا قصور معاف کردو مجھے نہیں معلوم تھا کہ یہ نالہ خود نبی کریمؐ نے یہاں لگوایا ہے ورنہ میں کبھی بھی اسے نہ اکھڑواتا۔ جو غلطی مجھ سے ہوئی وہ لاعلمی میں ہوئی آپ میرے کندھوں پہ چڑھ کریہ نالہ وہاں لگادیں"۔
حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ نے فرمایا: ہاں انصاف کا تقاضہ بھی یہی ہے اور پھر لوگوں نے دیکھا کہ اتنی وسیع سلطنت پہ حکمرانی کرنے والے حکمران لوگوں کو انصاف مہیا کرنے کے لیے دیوار کے ساتھ کھڑا تھا اور حضرت عباس رضی اللہ عنہ نالہ نصب کرنے کے لیے ان کے کندھوں پر کھڑے تھے۔ پر نالہ لگانے کے بعد حضرت عباس رضی اللہ عنہ فوراَ نیچے اترے اور فرمایا امیر المومنین میں نے جو کچھ کیا اپنے حق کے لیے، جو آپ کی انصاف پسندی کے باعث مل گیا اب میں آپ سے بے ادبی کی معافی مانگتا ہوں۔

اس کے ساتھ ہی حضر عباس رضی اللہ عنہ نے اپنا مکان اللہ کے راستے میں وقف کردیا اور امیر المومنین کو اختیار دیا کہ وہ مکان گِرا کر مسجد میں شامل کر لیں تاکہ نمازیوں کو جگہ کی تنگی سے جو تکلیف ہوئی وہ بھی کم ہوجائے ۔

اللہ سے دعا ہے کہ ہماری عدالتوں کو بھی حق کا فیصلہ دینے کی توفیق دے اور ایسے حکمران بھی دئے جو خود کو قانون سے بالاتر نہ سمجھیں۔آمین

Monday, July 2, 2012

American Girl model booker Sara's story,In his Own language - Story of my life امریکی ماڈل گرل سارہ بوکر کی کہانی اپنی زبان

American Girl model booker Sara's story,In his Own language - Story of my life
امریکی ماڈل گرل سارہ بوکر کی کہانی اپنی زبان
Pydahuyy in New York in the heart of America. His early youth passed like an American girl. This an artifact of the great city of the U.S. Interests thakh engagingly full of life and attractiveness of participating in the race to be ahead of guidance. But which seemed to him as he appeared tall and achievements rbrhty floors are agreed, it was the confidence I had risen. in their inner space, a strange feeling ... it was a strange lack. this kamayar life was apparently higher, as confidence in her was broken. kahl he wanted, was not sjhayy mgrasy solution.
C occurred after he tired of life. Arrived buzzing msdaq tight arrival he handed over the drugs themselves, but inside the fort that had been increasing instead of diminishing. Someone advised him to keep himself busy dyakh chraskty from thinking that they know, so that women's rights spokeswoman, social worker had worked as a welfare and public welfare, in a very short period gardyy flag victory in the field, and his name started to ring kahrtrf dnka , but ... as long as the disease got worse ... the pace of drug development in the glow of his career was coming, so quickly in her self-esteem was becoming an idol Particle Particle. end of which he is kyacyz acquisition by the demands of conscience, despite thinking he had failed to understand, fail altogether.
The Nine Zero suddenly came into his life ... the destruction of the World Trade Center and Pentagon after the attacks on Islam are everywhere dykhakh. Hindus, Jews and Christians the world if their energies doing something that is against Islam and Islamic values. Islam was not interested in him, not positive or negative, that Islam is a fiction of the past, a forgotten story'' and'' a monument of stones was considered. when his ears hrtrf resonant voices erupts from the exploitation of women and Islam aursuhr foot foot house maid does more than any place, he decided that his voice should be included in the'' anti'' suruguga , but with his reputation and status in society due to begin its regular offerings. He thought at first that she be swayed by the noise, the freedom of women and bzam almbrdarhy kuys Islam is the biggest barrier to women's rights cause.
Then why ... he decided that the research should krlyny. He was sure that this research will be his Islamic opposition kabaas more intense, I did not think his paranoia and his own opinion of this research about Muslims will be radically changed, or perhaps kruaghunt'' It does not like to drink, perhaps even bother.
The research started with a senior social worker by the state and religion without any discrimination and justice for all human welfare was the appellant. After that meeting he realized that justice, humanity and universal values ​​of freedom aurahtram which are greater than other religions, Islam does utrgyb invitation. It was a great discovery, was the fact that they do not easily accept.
An Islamic research center obtained by contacting the translation of the Qur'an began to study it. First of the style and manner attracted her, then this book's ynat, about human life Abdullah also described undeniable facts and highlights the relationship of God, a comprehensive description of a book before it, a philosophy and a thinker and writer, was not in theory. he started to think that this option It can not speak of any person ... within this revolutionary recipe book as the one caused by a bhuncal. She saw that the person directly addressed to his teachings and his soul is made. described in the Quranand the mirror showed Jamil, the other major religions and faiths,'' see'' only'' Ghazi gftarky ... and finally the moment came when he decided that he wants to relax, only Islam can be achieved by accepting. its internal bay tabyun and anxiety can be cured only by faith and not practical solutions adventures have become a Muslim.
Longer than the life he could not stay away, he had converted to Islam and marry a Muslim mrdsy. A burqa, a head and neck covering askarf bought one, who is a Muslim woman's Islamic dress. All One thing that changed was some sort thabs uskun aurkud confidence and inner satisfaction that they feel safe ... freedom from the floor are now hmknar. depict his impressions in these words:
'' I was very happy that his eyes were now signs of surprise and distance, who watched me like a hawk nnhy bird hunters and their prey. Screen a large burden of my shoulders and I had a mild special kind of learned from slavery and humiliation. now lbhany hearts of others never make up for hours. was now free from this slavery. aprdh Mir was still just my whole body except hands and face is covered, I told my husband that I want to cover face, because I think it will be to convince more of my Lord, he encouraged me, they took me to a shop where I bought a full Islamic veil began to Arabic burqa. Today I took off my sexy clothes aurmgrb dlrba lifestyle of its creator, except through a decent life and to serve the notice is pleasure in uatmynanI was wrong, Praise! and appellant now I am also a supporter of women's rights, which allows Muslim women to their responsibilities adakryn faith, a good Muslim to help their husbands, their children they like to train hard and follow the religion of humanity in darkness stray light into the lighthouse.


امریکی ماڈل گرل سارہ بوکر کی کہانی اپنی زبان

میں امریکہ کے قلب نیویارک میں پیداہوئی۔ اس کی ابتدائی جوانی ایک امریکی لڑکی ہی کی طرح گزری۔اس کاایک ہی شوق تھاکہ امریکا کے عظیم شہر کی تفریح بھری زندگی کی جاذبیت اور دلکشی کی دوڑ میں حصہ لے اورسب سے آگے نکل جائے۔لیکن اسے لگتا تھا کہ اس کی کوشش جس قد ربڑھتی اور وہ جتنا بظاہر کامیابیوں کی منزلیں طے کرتی جاتی ،اس کی بے اعتمادی میں اسی قدراضافہ ہوتا جاتا تھا۔وہ اپنے باطن میں ایک انجانا سا خلا…ایک عجیب سی کمی محسوس کر رہی تھی۔اس کامعیار زندگی بظاہر جتنا اونچا ہو رہا تھا،اس کا اندر کا اعتماد اتنا ہی ٹوٹتا جا رہا تھا۔وہ اس کاحل چاہتی تھی ،مگراسے کوئی حل سجھائی نہیں دے رہا تھا۔
آخر وہ اس زندگی سے تنگ سی آگئی ۔تنگ آمد بجنگ آمد کے مصداق اس نے خود کو نشے کے حوالے کردیا،مگر اندر کی بے کلی تھی کہ بجائے کم ہونے کے بڑھتی ہی جارہی تھی۔کسی نے اسے مشورہ دیاکہ خود کو مصروف رکھ کر وہ ان سوچوں سے جان چھڑاسکتی ہے،چنانچہ وہ حقوق نسواں کی ترجمان سماجی کارکن کے طور پر فلاحی اور رفاہ عامہ کے کام کرنے لگی،اس نے بہت کم عرصے میں اس میدان میں بھی فتح کے جھنڈے گاڑدیے، اوراس کے نام کاہرطرف ڈنکا بجنے لگا،مگر …مرض بڑھتا گیا جوں جوں دوا کی … جس رفتار سے اس کی ترقی میں اضافہ اوراس کے کیریئر میں نکھار آرہا تھا،اسی سرعت سے اس کے اندر کی خود اعتمادی کا بت ریزہ ریزہ ہوتا جارہا تھا۔آخر وہ کیاچیز ہے جس کے حصول کا اس کے ضمیر کی طرف سے مطالبہ ہے،وہ بہت سوچنے کے باوجود سمجھنے میں ناکام تھی،یکسر ناکام۔
اچانک س کی زندگی میں نائن زیرو آگیا…ورلڈ ٹریڈ سینٹر اور پینٹاگون کی تباہی کے بعد اس نے دیکھاکہ ہر طرف سے اسلام پر حملے ہو رہے ہیں۔ہندو،یہودی اورعیسائی دنیا اگر اپنی توانائیاں کسی چیز کے خلاف صرف کررہی ہے تو وہ اسلام اور اسلامی اقدار ہیں۔اسلام سے اسے کبھی کوئی دلچسپی نہیں رہی تھی،نہ مثبت نہ منفی،وہ اسلام کو ماضی کا ایک افسانہ،ایک بھولی بسری کہانی اور''پتھروں کے دور''کی ایک یادگار سمجھتی تھی۔جب اس کے کانوں میں ہرطرف سے یہ آوازیں گونجنے لگیں کہ اسلام عورتوں کا استحصال کرتا اور اسے گھر کی نوکرانی اورشوہر کے پاؤں کی جوتی سے زیادہ کوئی مقام نہیں دیتا،تواس نے فیصلہ کیا کہ وہ بھی اپنی آواز بھی اس اسلام مخالف ''شوروغوغا''میں شامل کرلے،بلکہ اسے اس کی شہرت اور معاشرے میں ایک اسٹیٹس کا حامل ہونے کی وجہ سے اس بات کی باقاعدہ پیشکشیں ہونے لگیں۔اس نے پہلے تو سوچا کہ وہ بھی اس رو میں بہہ جائے ،کیوں کہ وہ عورتوں کی آزادی کی علمبردارہے اور بزعم خویش اسلام حقوق نسواں کی راہ کی سب سے بڑی دیوار ہے۔
پھر جانے کیوں …اس نے فیصلہ کیا کہ پہلے تحقیق کرلینی چاہیے۔اسے یقین تھا کہ اس کی تحقیق اس کی اسلام مخالفت میں مزید شدت کاباعث بنے گی،اس کے وہم و گمان میں بھی نہیں تھا کہ اس تحقیق سے اس کی اپنی رائے اسلام اورمسلمانوں کے بارے میں یکسر بدل جائے گی،ورنہ شاید وہ ''یہ کڑواگھونٹ ''پینے کی شاید زحمت بھی گوارا نہ کرتی۔
تحقیق کی ابتدا اس نے ایک ایسے سینئر سماجی کارکن سے ملاقات کے ذریعے کی،جو بلا تفریق ملک و مذہب سارے انسانوں کے لیے انصاف اور فلاح و بہبود کا داعی تھا۔اس ملاقات کے بعد اسے احساس ہوا کہ انصاف،آزادی اوراحترام انسانیت آفاقی اقدار ہیں،جن کی دوسرے مذاہب سے بڑھ کر اسلام دعوت وترغیب دیتا ہے۔ یہ اس کے لیے ایک بڑا انکشاف تھا،جسے وہ آسانی سے قبول نہیں کرسکتی تھی۔
اس نے ایک اسلامک ریسرچ سینٹر سے رابطہ کر کے قرآن مجید کا ترجمہ حاصل کیا اور اس کا مطالعہ کرنے لگی۔پہلے تو قرآن کے اسلوب و انداز نے اسے اپنی جانب متوجہ کیا، پھر اس کتاب میں کا ئنات، انسان اور زندگی کے بارے میں بیان کردہ ناقابل تردید حقائق نیز عبد و معبود کے رشتے پر جو روشنی ڈالی گئی ہے،ایسی جامع تفصیل اسے اس سے قبل کسی کتاب،کسی فلسفے اور کسی مفکر و مصنف کی تھیوری میں نظر نہیں آئی تھی۔وہ بے اختیار یہ سوچنے لگی کہ یہ کسی انسان کا کلام نہیں ہوسکتا…اس انقلابی کتاب ہدایت نے اس کے اندر گویا ایک بھونچال سا برپا کردیا۔اس نے دیکھا کہ قرآن نے اپنی تعلیمات کا مخاطب براہ راست انسان اور اس کی روح کو بنایا ہے۔اس نے قرآن میں بیان کردہ عورت کے حقوق کا مقابلہ دوسرے ادیان و مذاہب سے کیا،تو اس میں بھی اسلام کو سب سے بڑھ کر پایا،پھر اس نے حضوراکرم ۖ کے فرامین ،آپ ۖ کے صحابہ کرام کی مبارک زندگیوں کو دیکھا تو قرآنی ہدایات کا کامل و مکمل نمونہ اور عکس جمیل نظر آیا،جب کہ دوسرے ادیان و مذاہب کے ''بڑے''اسے صرف ''گفتارکے غازی''نظر آئے… اور آخرکار وہ لمحہ آگیا جب اس نے فیصلہ کرلیا کہ وہ جس سکون کیلئے بیتاب ہے، وہ صرف اسلام قبول کرکے ہی حاصل ہوسکتا ہے۔اس کی داخلی بے تابیوں اور اضطراب کا علاج صرف ایمان سے ہوسکتا ہے اور اس کے مسائل کا حل مہم جوئی میں نہیں عملی مسلمان بننے میں ہے۔
وہ اب اسلامی زندگی سے زیادہ دیر دور بھی نہیں رہ سکتی تھی،اس نے اسلام قبول کرکے ایک مسلمان مردسے نکاح کرلیا۔ اس نے ایک برقعہ اور سر اور گردن کو ڈھکنے والا اسکارف خرید لیا ،جو ایک مسلم عورت کا شرعی لباس ہے۔سب کچھ ویسا ہی تھابس ایک چیز بدلی ہوئی تھی یعنی اس کا اندرونی اطمینان وسکون اورخود اعتمادی اور تحفظ کا احساس…گویا وہ حقیقی آزادی کی منزل سے اب ہمکنار ہوئی ہو۔ وہ اپنے تاثرات ان الفاظ میں بیان کرتی ہے:
''میں بڑی خوش تھی کہ ان آنکھوں میں اب تعجب اور دوری کے آثار تھے ،جو پہلے مجھ کو ایسے دیکھتے تھے جیسے شکاری اپنے شکار کو اور باز ننھی چڑیا کو۔ حجاب نے میرے کندھوں کے ایک بڑے بوجھ کو ہلکا کردیا اور مجھے ایک خاص طرح کی غلامی اور ذلت سے نکال دیاتھا۔اب دوسروں کے دلوں کو لبھانے کیلئے میں گھنٹوں میک اپ نہیں کرتی تھی۔ اب میں اس غلامی سے آزاد تھی۔ابھی تک میر اپردہ یہ تھا کہ صرف ہاتھ اور چہرے کو چھوڑ کر میرا پورا جسم ڈھکا ہوتا،میں نے اپنے شوہر سے کہا کہ میں چہرہ بھی ڈھکنا چاہتی ہوں ، اس لیے کہ مجھے لگتا ہے کہ یہ میرے رب کو زیادہ راضی کرنے والا عمل ہوگا،انہوں نے میری حوصلہ افزائی کی،وہ مجھے ایک دکان پر لے گئے جہاں میں نے ایک عربی برقعہ خریدا اور مکمل شرعی پردہ کرنے لگی۔آج مجھے اپنے فحش لباس کو اتار کر اورمغرب کی دلربا طرز زندگی کو چھوڑ کر اپنے خالق کی معرفت و بندگی والی ایک باوقار زندگی کو اختیار کرنے سے جو مسرت واطمینان کااحساس ہوا ہے میں اس کی کوئی مثال نہیں دے سکتی …میری وہ سہیلیاں جو میرے ساتھ حقوق نسواں کے محاظ پر مصروف کار تھیں،مجھے ڈراتی تھیں کہ اسلام قبول کرکے تم ایک عضو معطل بن کر رہ جاؤ گی،مگر یہ ان کی کم فہمی یا اسلام کے بارے میں غلط سوچ تھی،الحمدللہ!اب میں بھی عورتوں کے حقوق کی حامی و داعی ہوں،جو مسلم عورتوں کو دعوت دیتی ہے کہ وہ اپنی ایمانی ذمہ داریوں کو اداکریں، اپنے شوہروں کی ایک اچھا مسلمان بننے میں مدد کریں،اپنے بچوں کو اس طرح تربیت دیں کہ وہ استقامت کے ساتھ دین پر جم کر اندھیروں میں بھٹکتی ہوئی انسانیت کیلئے مینارہ نور بن جائیں''۔